مہاراشٹرکانگریس پر بی جے پی کےخوف کاسایہ

ممبئی:مہاراشٹر کانگریس کے صدر اشوک چوان نے باغی لیڈروںکے خلاف کارروائی شروع کردی ہےاورپارٹی کوبکھرنے کے بچانے کے لیے نئے سرے سے کام کرناشروع کردیاہے ۔ ناراین رانے کے بی جے پی میں شمولیت کی خبروں نے کانگریس پارٹی کومستعدکردیاہے اوروہ چاہتی ہے کہ پارٹی کے کارکنان کوبی جے پی میں جانے نہ دیاجائے چنانچہ اس وجہ سے یہ کام حسین دلوائی اورراجن بھوسلے کوسونپاگیاہے ۔پارٹی ذرائع کے مطابق اشوک چوان نے ان پریہ ذمے داری ڈالی ہے کہ وہ ریاست کےمختلف اضلاع کادورہ کریں ،وہاں کے سیاسی حالات کاجائزہ لیں اوراس بات کویقینی بنائیں کہ کوئی بھی پارٹی کارکن بی جے پی میں شمولیت اختیارنہ کرسکیں۔ذرائع کے مطابق ناراین رانے کابی جے پی میں شمولیت کےامکان نے کانگریس کوتشویش میں مبتلاکردیاہے ۔اسی تشویش کانتیجہ ہے کہ پارٹی باغیوں کے خلاف کارروائی کا آغاز ہوگیا ہے  اور اس کارروائی میں مہاراشٹرکے سندھودرگ ضلع کی کانگریس کمیٹی بھی تحلیل کردی گئی ہے۔خیال رہے کہ سندھودرگ ضلع کی کانگریس کمیٹی کی قیادت دتاسامنت کررہے تھے جب کہ بلاک کانگریس کمیٹیوں کی قیادت سینئر لیڈر ر ناراین رانے کے پاس تھی ۔کانگریس کواندازہ ہے کہ ناراین رانے بی جے پی میں شمولیت اختیارکرسکتے ہیں چنانچہ اسی وجہ سے ضلع کی کمیٹی تحلیل کردی گئی ہے ۔ ذرائع کے مطابق ان کی جگہ پراب سابق وزیربھائی ساونت کے بیٹے وکاس ساونت کونئی ضلع کمیٹی کی صدارت دیے جانے کی توقع ہے ۔سابق وزیراعلیٰ ـ مہاراشٹراشوک چوان نے بتایاکہ ضلع سے ایک شخص کی بھی پارٹی میں نئی رکنیت حاصل نہ کرنے کی وجہ سے انتخاب نہیں ہوپارہے تھے چنانچہ پارٹی کے پاس ضلع کمیٹی کی تحلیل کے سواکوئی چارہ کارہی نہ تھا ۔پھرہم نے کمیٹی کوختم کرنے اورنئی کمیٹی بنانے کافیصلہ کرلیا۔