حاجی علیؒ کے نزدیک سڑک حادثہ

تیز رفتار کار سمندر کنارے جا گری ،۲؍ افراد زخمی، کار ڈرائیور گرفتار ، پولیس نے ڈرائیور کے خون کا نمونہ جانچ کیلئے بھیج دیا

ممبئی(اسلم شیخ) حاجی علی کے نزدیک اور تاردیو پولس اسٹیشن کے حدود میں صبح پانچ بجے کے قریب ایک تیز رفتار ٹورسٹ کار سڑک کنارے نصب آہنی ڈیوائیڈر کو توڑتے ہوئے مضبوط سیفٹی وال سے ٹکرائی اور سیفٹی وال کے اوپر سے اچھل کر مذکورہ کار سمندر کنارے پتھروں پر جا گری ۔اس حادثہ میں دو افراد آدتیہ آدیش تاوڑے(23) اور اس کا دوست زخمی ہوگیا جبکہ سرخ رنگ کی کار کے پرخچے اڑ گئے ۔پولس کے مطابق کار ڈرائیور کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور اس کے خون کا نمونہ لے کر اسپتال بھیج دیا گیا تاکہ یہ معلوم ہو سکے کہ ملزم نے شراب نوشی کی تھی یا نہیں؟موصولہ اطلاعات کے مطابق یہ حادثہ حاجی علی کے نزدیک این ایس سی آئ کلب کے مقابل پیش آیا جب سرخ رنگ کی تیز رفتار ٹورسٹ کار نمبر  (MH-01-CJ-4265) کے ڈرائیور کا توازن کار سے چھوٹ گیا اور کار پہلے سڑک کنارے نصب آہنی بیریکیٹر کو توڑتے ہوئے سیفٹی وال سے ٹکرائ ۔کار کی رفتار اس قدر تیز تھی کہ مذکورہ کار سیفٹی وال کے اوپر سے اچھلتے ہوئے سمندر کنارے پتھروں پر جا گری ۔واردات کی اطلاع ملتے ہی تاردیو پولس کا اسٹاف جائے وقوع پر پہنچا اور زخمی لوگوں کو نکال کر ان کو نزدیکی اسپتال روانہ کیا ۔بتایا جاتا ہے کہ اس حادثہ میں کار ڈرائیور کو بھی چوٹ لگی ہے ۔اور مرہم پٹی کے بعد پولس نے 35 سالہ کار ڈرائیور کو دفعات 279/337/427 کے تحت کاروائی کرتے ہوئے گرفتار کر لیا ۔پولس متاثرہ افراد اور عینی شاہدین کی مدد سے یہ معلوم کرنے کی کوشش میں مصروف ہے کہ اس حادثہ کی اصل وجہ کیا ہے؟ جبکہ پولس نے اسپاٹ پنچ نامہ کیا اور جس راستے سے مذکورہ کار گزری تھی وہاں پر نصب سی سی ٹی وی کیمروں کی جانچ کر رہی ہے تاکہ کار کے صحیح رفتار کے بارے میں معلوم ہو سکے ۔تاردیو پولس اس معاملے میں مزید تحقیقات کر رہی ہے ۔معلوم ہو کہ حاجی علی کے قریب روزآنہ رات کے وقت بے ترتیب اور بہت زیادہ تیز رفتاری کے ساتھ کاریں اور مہنگی موٹر سائکلیں بھی دوڑتی ہیں جس کی وجہ سے یہاں پر اکثر حادثات ہوتے رہتے ہیں وہیں رات میں شراب پی کر بھی گاڑیاں چلانے کی وجہ سے حادثات ہوئے ہیں یہ معاملہ بھی ایسا ہی لگ رہا ہے جس میں حادثہ کا شکار ہوئی کار اس کا نشانہ بنی ۔ حالانکہ ابھی اس کی تفتیش چل رہی ہے لیکن یہ معاملہ ایک دن کا نہیں ہے یہاں پر گاڑیوں کی ریسنگ کا معاملہ روز کا ہے مقامی عوام کا مطالبہ رہتا ہے کہ یہاں پر پولیس گاڑیوںکی اسپیڈ پر کنٹرول کرے لیکن مقامی افراد کے کئی بار کے مطالبے کے بعد بھی ٹرافک پولیس ایسے منچلوں کے اوپر کارروائی نہیں کرتی وہیں یہاں پر لوٹس کالونی سے خواتین و بچے بھی سڑک پار کر کے اس طرف دریا کنارے بیٹھنے کےلئے جاتے ہیں اس پر بھی توجہ دینا چاہیئے ۔