ریان اسکول کیس :نشے میں نہیں تھا اشوک میڈیکل کرنے والی ڈکٹر کا دعویٰ

گروگرام : ریان انٹرنیشنل اسکول میں ۷؍ سالہ بچہ کے قتل کے معاملہ میں ایک اور نیا موڑ آگیا ہے۔ جمعہ کو ملزم اشوک کے وکیل نے دعوی کیا تھا کہ پولیس نے نشے کا انجکشن لگاکر اس سے اعتراف جرم کروایا ۔ علاوہ ازیں اس کے اہل خانہ نے بھی الزام لگایا تھا کہ پولیس نے اشوک کے ساتھ کافی زدو کوب کی تھی اور پیشی کے وقت اس کے پیروں میں سوجن تھی ۔ تاہم عدالت میں پیشی سے قبل اشوک کا میڈیکل کرنے والے ڈاکٹروں نے اس سے واضح طور پر انکارکردیا ہے۔پولیس ریمانڈ کے بعد ملزم کا سب سے پہلے میڈیکل کرنے والی خاتون ڈاکٹر نشو نے بتایا کہ ملزم کو کسی بھی قسم کا نشہ نہیں دیا گیا تھا ۔ انہوں نے بتایا کہ میڈیکل کرتے وقت اس کے ہاتھ اور پیر میں بھی سوجن نہیں تھی۔ ڈاکٹر نشو کے مطابق ملزم پوری طرح صحت مندنظر آرہا تھا ، لیکن اس کا بی پی ضرور بڑھا ہوا تھا۔نشہ کے انجکشن کے سوال پر انہوں نے بتایا کہ اشوک میں اس طرح کی کوئی علامت نہیں تھی۔ ڈاکٹر نے بتایا کہ ملزم سے جو پوچھا گیا اس کا اس نے صحیح طریقہ سے جواب بھی دیا۔ایک دیگر ڈاکٹر پروین نے ملزم اشوک کا ڈی این اے اور سیکس سے متعلق میڈیکل کیا ۔