عیدالاضحی : غیر قانونی قربانی پر عدلیہ کا سخت موقف

دیو نار سلاٹر ہائوس کے جنرل منیجر کا حکم کالعدم ‘ بی ایم سی احکامات کے تحت صرف سلاٹر ہائوس میں ہی قربانی کی اجازت ‘ بامبے ہائیکورٹ میں پٹیشن پر عدلیہ کا فیصلہ

): ممبئی ہائی کورٹ نے عید الاضحیٰ کے موقع پر شہر و مضافات میں بڑے جانوروں کی غیر قانونی قربانی پر سخت پابندی عائد کر دی ہے۔ اب صرف دیونار سلاٹر ہاؤس میں بڑے جانوروں کی قربانی ہو گی اگر کسی نے بھی ہائی کورٹ کے حکم کی خلاف ورزی کی تو اس کے خلاف سخت قانونی کاروائی کی جائیگی ۔ ان احکامات کے بعد اب کچھ بھی شک و شبہات نہیں ہے کہ دیونار سلاٹر ہاؤس کے علاوہ  کسی اور جگہ جانوروں کی قربانی ہو  ۔ دیونار سلاٹر ہاؤس میں جانوروں کی قربانی کیلئے تمام تر سہولیات موجود ہیں مگر قربانی کے بعد گوشت اپنے گھروں کو لے جانا کسی جنگ سے کم نہیں ہے حالانکہ پولس کمشنر دتہ پڈسلگیکر نے کہا ہے کہ دیونار سلاٹر ہاؤس سے لوگ جب اپنے گھروں کو گوشت لے کر جائینگے تو انہیں تحفظ فراہم کیا جائے گا اب یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا پولس کمشنر اپنی کوشش میں کہاں تک کامیاب ہوتے ہیں ؟ عید الاضحی جیسے جیسے قریب آ رہی ہے ویسے ویسے پریشانیاں بڑھتی جا رہی ہیں، جانوروں کو لانے اور لے جانے کا مسئلہ جہاں سنگین ہوتا جا رہا ہے وہیں ان کی گاڑیوں کو راستہ میں روک کر صرف پریشان کیا جا رہا ہے ۔